About Us 2019-07-01T18:32:31+05:00

ABOUT MEHRBAN ALI                  مہربان علی کے بارے میں

Mehrban Ali is the 41st grandson of Imam Ali A.S. He was born on 1st December 1987 in a small town of Tando Mohammad Khan which is 40 kilometers away from South of Hyderabad in Sindh province of Pakistan.

Since his childhood, Mehrban Ali kept much  attachment with his grandfather (Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi) who used to keep telling him about his ancestral books and this is how Mehrban Ali had attachment with his elders since the childhood & his interest with their book kept increasing.   

سید مہربان علی شمسی سبزوای تبریزی امام علی علیہ السلام کے اکتالیسویں پوتے ہیں، جن کی ولادت 1 دسمبر 1987 میں ایک چھوٹے سے شہر ٹنڈومحمد خان میں ہوئی جو کہ صوبہ سندھ کے شہر حیدرآباد سے 40 کلومیٹر جنوب کی طرف واقع ہے۔

 بچپن سے ہی سید مہربان علی شمسی سبزواری تبریزی اپنے دادا سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی سے بہت زیادہ لگائو رکھتے تھے جو اُنہیں اپنی خاندانی کتابوں کے بارے میں بتاتے رہتے تھے اور یوں مہربان علی کو بچپن سے ہی اپنے بزرگوں سے لگائو تھا اور اُن کی کتابوں سے ان کی دلچسپی بڑھتی گئی۔

Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi     

Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi is the 39th grandson of Imam Ali alaihis salaam. Our ancestral books which reached Syed Hussain Shah Shamsi and his sister Syeda Bibi Badshah Zadi R.A. by going through Imam Jafar Sadiq alaihis salaam and from him to Hazrat Shams Tabrizi and from him to Shah Turel Shamsi R.A. from him to Hazrat Kabeer Shah Shamsi. From them they kept providing their devotees benefits from the source of those books, it was the effort of Syed Hussain Shah Shamsi R.A that our ancestral books which are treasure of knowledge someone would apparently show them, that is by since the childhood he was nurturing Mehrban Ali likes such so that he could spread this knowledge.   

 سید حسین شاہ شمسی سبزواری  تبریزی رحمۃ اللہ علیہ

سید حسین شاہ شمسیؒ امام علی علیہ السلام کے 39 ویں پوتے تھے، سید حسین شاہ شمسی اور اُن کی بہن سیدہ بیبی بادشاہ زادی سبزواری تبریزیؒ اپنی خاندانی کتابوں جو امام جعفر صادق علیہ السلام سے ہوتی ہوئی شاہ شمس تبریزؒ تک آئیں اور اُن سے حضرت شاہ طُریل شمسیؒ تک، اُن سے حضرت کبیر شاہ شمسیؒ تک اور اُن سے ہوتی ہوئی سیدہ بی بی بادشاہ زادیؒ تک آ پہںچیں، سید حسین شاہ شمسیؒ اور بی بی بادشاہ زادیؒ اپنے عقیدت مندوں کو اُن کتابوں کے وسیلے سے فیضیاب بھی کرتے رہتے تھے، سید حسین شاہؒ کی کوشش تھی کہ ہماری خاندانی کتابیں جو ایک علمی خزانہ ہیں ان کو کوئی منظرعام پر پیش کرے، تبھی وہ بچپن سے ہی مہربان علی کی ایسی تربیت کر رہے تھے تاکہ مہربان بڑے ہوکر یہ علم پھیلا سکیں۔

Hazrat Shah Shams Tabrizi R.A

Hazrat Shah Shams Tabrizi R.A is the 21st grandson of Imam Ali A.S and those knowledge that from Imam Jafar Sadiq A.S generation by generation reached him and were giving them that book shape so that human guidance could be done and those that are knowledge lovers can be provided a path of learning knowledge.

حضرت شاہ شمس تبریزی سبزواری رحمۃ اللہ علیہ

حضرت شاہ شمس تبریزی سبزواری  رحمۃ اللہ علیہ امام علیہ السلام کے 21 ویں پوتے ہیں اورجو علم حضرت امام جعفر  صادق علیہ السلام سے پشت در پشت اُن تک پہںچیں اُن کو وہ کتابی شکل دے رہے تھے تاکہ انسانوں کی اصلاح کی جائے اور جو علم کے شیدائی ہیں اُن کو علم سیکھنے کا ایک راستہ فراہم ہو۔

Hazrat Shah Turel Shamsi Sabzwari Tabrezi R.A

In the year of 1587 A.D when shah Shams Tabrez’s A.S family came to the south part of Sindh by migrating then first of all they started to live in Tando Bagho. The most pious and sobered person of that family, his name was Hazrat Shah Turel R.A who also used to take care of the books written by Shah Shams Tabrez R.A and also used to give knowledge by the source of those books to his devotees. Even today his auspicious shrine is present in Tando Bagho.

حضرت شاہ طریل شمسی  سبزواری تبریزی رحمۃ اللہ علیہ

سن 1587 عیسوی میں جب شاہ شمس تبریزؒ کا خاندان سندھ کے پچھلے حصے میں ہجرت کرکے آیا تو سب سے پہلے وہ ٹنڈو باگو میں رہنے لگا، اُس خاندان کے جو سب سے زیادہ نیک اور پرہیزگار شخص تھے، اُن کا نام حضرت شاہ طریلؒ تھا جو شاہ شمس تبریزؒ کی لکھی ہوئی کتابیں سنبھالتے بھی تھے اور اپنے عقیدت مندوں کو اُن کتابوں کے وسیلے سے علم بھی دیتے تھے، آج بھی اُن کا روضہ مبارک ٹنڈو باگو میں موجود ہے۔

Syed Kabeer Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi ( Shah Wah Near Matli)

After the death of Hazrat Shah Turel R.A he made a will to his elder son Syed Baqir Ali Shah R.A that after burying me here at Tando Bagho, you dedicate yourself in the various villages and towns of Sindh in preaching the religion of Allah. So this is how Syed Baqir Ali Shah used to keep giving lesson of love to the various villages and towns of Sindh by acting on “Sunnah” of his family and this is how by keep preaching this Shamsi family arrived Shah Wah near Matli Sindh. After him his son Syed Fateh Ali Shah and after him Hazrat Kabeer Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi R.A were acting of there ancestral “Sunnah” that at one night he saw in a dream that near Shah Wah a big storm about to come and at the same time he decided to migrate with his family towards Tando Mohammad Khan. As among his devotees Khuwaja were in major quantity that is by migrating Tando Mohammad Khan he decided to live there, even today that place is still called Khuwaja Mohalla and as Kabeer Shah stated just like that in a few days a big storm came near Shah Wah and all the people that did not migrate from there either they died by drowning or died by disease. Because of this incident much more faith increased among his devotees. When the time of his death came near then he stated a will that I should be buried near Shah Wah where the grave of my father Fateh Ali Shah R.A, even today his specious shrine is the door of benefit for each special and common, whose auspicious shrine is present even today in Shah Wah near Matli Sindh.

سید کبیر شاہ شمسی سبزواری تبریزی رحمۃ اللہ علیہ شاہ واہ (نزد) ماتلی

حضرت شاہ طریلؒ کی رحلت کے بعد آپ  نے اپنے بڑے بیٹے سید باقر علی شاہؒ کو یہ وصیعت کی کہ میری تدفین یہیں ٹنڈو باگو میں کرکے تم سندھ کے مختلف گائوں دیہات میں اللہ کے دین کی تبلیغ کرنے کے لئے اپنے آپ کو وقف کردو تو یوں سید باقر شاہؒ اپنے خاندان کی سنت پر عمل کرتے ہوئے سندھ  کے مختلف گائوں دیہات میں لوگوں کو محبت کو درس دیتے رہے اور یوں تبلیغ کرتے کرتے یہ شمسی خاندان شاہ واہ نزد ماتلی سندھ تک آپہںچا، آپ کے بعد آپ کے بیٹے سید فتح علی شاہ شمسی اور اُن کے بعد  حضرت کبیر شاہؒ خاندانی سنت پر عمل کر ہی رہے تھے کہ ایک رات آپ نے خواب دیکھا کہ شاہ واہ کے قریب ایک بہت بڑا طوفان آنے والا ہے اور تبھی آپ نے اپنے خاندان کے ساتھ ٹنڈو محمد خان کے طرف ہجرت کرنے کا فیصلہ کیا، جیسے کہ آپ کے مریدوں میں خواجہ کثیر تعداد میں موجود تھے تبھی آپ ہجرت کرکے ٹنڈو محمد خان میں رہنے لگے، آج بھی اُس جگہ کو خواجہ محلہ کہا جاتا ہے اور جیسے کبیر شاہؒ نے فرمایا ویسے ہی کچھ  دنوں میں شاہ واہ کے قریب ایک بہت بڑا طوفان آیا اور جتنے بھی لوگوں نے وہاں سے ہجرت نہیں کی تھی وہ سب یا تو ڈوب کر مر گئے یا پھر بیماریوں سے مر گئے۔ اس واقعے کے سبب آپ کے مریدوں کے ایمان میں اور بھی اضافہ ہوگیا۔ جب آپ کا وقت رحلت قریب آیا تو آپ نے وصیعت فرمائی کہ مجھے شاہ واہ کے قریب تدفین کیا جائے جہاں میرے والد فتح علی شاہؒ کی قبر ہے، آج بھی آپ کا روضہ مُبارک ہر خاص و عام کے لئے فیض کا دروازہ ہے، جن کا مزار مبارک آج بھی شاہ واہ نزد ماتلی میں واقع ہے۔

Bibi Badshah Zadi R.A. Tando Mohammad Khan

After the death of Hazrat Kabeer Shah R.A this Shamsi family kept living in Tando Mohammad Khan and the responsibility of family came over the head of Syed Ghulam Ali Shah and Ghulram Rasool Shah and after their death the elder daughter of Syed Ghulam Rasool Shah Bibi Badshah Zadi R.A kept taking care of the responsibility of her family and kept telling her devotees those ancestral knowledge which she heard from her ancestors and read from the books of elders because at that time after the death of her father there used to be her two little brothers whose ages were not that much that they can take care of the family, that is why responsibility came over her. Her shrine is present even today in Tando Mohammad Khan.

بی بی بادشاہ زادی شمسی سبزواری تبریزیؒ  ٹنڈو محمد خان

حضرت کبیر شاہؒ کی رحلت کے بعد یہ شمسی خاندان ٹنڈو محمد خان میں رہتا رہا اور خاندان کی ذمہ داری سید غلام علی شاہ اور سید غلام رسول شاہ کے سر آگئی اور اُن کی رحلت کے بعد سید غلام رسول شاہ کی بڑی بیٹی بی بی بادشاہ زادیؒ خاندان کی پوری ذمہ داری سنبھالتی رہیں اور اپنے مریدوں کو وہ خاندانی علم بتاتی رہیں جو اُنہوں نے اپنے دادا پر دادا سے سینہ در سینہ سنی تھیں یا بزرگوں کی کتابوں سے پڑھی تھیں
کیوں کہ اُس وقت آپ کے بابا کی رحلت کے بعد آپ کے دو چھوٹے چھوٹے بھائی تھے جن کی عمر اتنی نہ تھی کہ وہ خاندان کو سنبھال سکیں تبھی ہی ذمہ داری آپ  پر آگئی، آپ کا مزار آج بھی ٹنڈو محمد خان میں واقع ہے۔

Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi

After Bibi Badshah Zadi R.A the books of the Syed Family were taken care by Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi R.A and from him reached to Mehrban Ali and Mehrban Ali from the source of those books by acting of the “Sunnah” of his ancestors spreads the message of peace and love among humans even today.

Dargah Syed Hussain Shah Shamsi is located in Tando Mohammad Khan which is placed in the south 40 kilometers away from Hyderabad city of Sindh.

Close to the auspicious grave of Hussain Shah Shamsi R.A. is also made auspicious shrine of Bibi Badshah Zari R.A, even today thousands of devotees acquire spiritual comfort and benefit by coming to the auspicious shrine.

درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی رحمۃ اللہ علیہ

بیبی بادشاہ زادیؒ کے بعد شمسی سادات کی خاندانی کتابیں سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزیؒ سنبھالتے تھے اور اُن سے مہربان علی تک آ پہںچیں اور مہربان علی اُن کتابوں کے وسیلے سے اپنے آبائو اجداد کی سنت پر عمل کرتے ہوئے آج بھی انسانوں میں امن اور محبت کا پیغام پھیلاتے ہیں۔ درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزیؒ ٹنڈو محمد خان میں موجود ہے جو کہ سندھ کے شہر حیدرآباد سے 40 کلومیٹر دور جنوب کی طرف واقع ہے۔ سید حسین شاہ شمسیؒ کی قبر مبارک کے پاس بی بی بادشاہ زادیؒ کا روضہ مبارک بھی بنا ہوا ہے، آج بھی سیکڑوں عقیدت مند روضہ مُبارک پر آکر روحانی سکون اور فیض حاصل کرتے ہیں۔

Services of Mehrban Aliمہربان علی کی خدمات

Mehrban Videos

Syed Mehrban Ali Shamsi Sabzwari Tabrezi by acting over the custom of his family keeps making in the shape of shorter videos of his ancestral books in his voice so that human can live among themselves with love and by respecting each other make the society better.

مہربان کی ویڈیوز

سید مہربان علی شمسی سبزواری تبریزی اپنے خاندان کی رسم پر عمل کرتے ہوئے اپنی آواز میں اپنی خاندانی کتابوں کو چھوٹی چھوٹی ویڈیوز کی شکل میں بناتے رہتے ہیں تاکہ انسان آپس میں محبت کے ساتھ رہ سکیں اور ایک دوسرے کی عزت کرکے معاشرے کو بہتر بنا سکیں۔

Mehrban Books

Mehrban Ali is also trying to present his ancestral books in the shape of Urdu and easy English so that upcoming lovers of knowledge can quench thirst of knowledge and by identifying their reality can make agree their Allah. All the services of the books of are being performed by the brother of Mehrban Ali Syed Jan Ali Shamsi Sabzwari Tabrezi.

مہربان کی کتابیں

مہربان علی اپنی خاندانی کتابوں کو اُردو اور آسان انگلش میں کتابی شکل میں پیش کرنے کی کوشش بھی کر رہے ہیں تاکہ آنے والے علم کے شیدائی اُن کتابوں سے  اپنے علم کی پیاس بُجھا سکیں اور اپنی حقیقت کو جان کر اپنے اللہ کو راضی کر سکیں، مہربان کی کتابوں کی ساری خدمات مہربان علی کے بھائی سید جان علی شمسی سبزواری تبریزی سر انجام دے رہے ہیں۔

مہربان فاؤنڈیشن

Mehrban Foundation in Pakistan is a non-profit, non-governmental, social welfare organization which Mehrban Ali has established, whose purpose is to provide free health, education and human rights to the people. All the services of Mehrban foundation are being organised by his elder brother Syed Shan Ali Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi, among which Mehrban School, Mehrban Hospital and “Dastarkhuwan e Imam Hassan A.S”, free ration to the needful and “Berozgari Khatam Program”  (Unemployment ending program) are included.

مہربان فاؤنڈیشن پاکستان میں غیر منافع بخش، غیر سرکاری، سماجی فلاح و بہبود کی تنظیم ہے جو کہ مہربان علی نے قائم کی ہے، جس کا مقصد عوام کو مفت صحت، تعلیم اور انسانی حقوق فراہم کرنا ہے، مہربان فاؤنڈیشن کی ساری خدمات کو مہربان علی کے بڑے بھائی سید شان علی شاہ شمسی سبزواری تبریزی منظّم کر رہے ہیں، جس میں مہربان اسکول، مہربان ہاسپیٹل، دسترخوان امام حسن علیہ السلام، مُستحقین کے لئے مُفت راشن اور بیروزگاری ختم پروگرام شامل ہیں۔

Mehrban School

Mehrban Ali has established a school near the shrine of his grandfather Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi R.A. where needy children are given free education and free books, whose authority Mehrban Ali has handed over to his uncle Syed Mumtaz Ali Shah because he has an experience of 20 years of education and schooling, it is the effort of Mehrban Ali and his team that in the upcoming time Mehrban School should be established different cities also “In Shaa Allah”.

مہربان اسکول

مہربان علی نے اپنے دادا سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزیؒ کی درگاہ کے قریب ایک اسکول قائم کیا ہے جہاں مفت تعلیم اور مفت کتابیں مستحق بچوں کو دی جاتی ہیں، جن کی سربراہی مہربان علی نے اپنے ماموں سید ممتاز علی شاہ کو سونپی ہے کیوں کہ اُن کے پاس 20 سال تعلیم و تدریس کا تجربہ ہے، مہربان علی اور اُن کی ٹیم کی کوشش ہے کہ آنے والے وقت میں مہربان اسکول مختلف شہروں میں بھی قائم کئے جائیں انشاء اللہ۔

Mehrban Hospital

Mehrban Ali has established a hospital near the shrine of his grandfather Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi R.A where poor are given free treatment and are provided free medicine whose headship is being done by Waqar Ahmed Soomro and along with him Dr. Mohammad Arshad Qureshi M.B.B.S who is a general physician, it is the effort of Mehrban Ali and team that in upcoming time that Mehrban Hospital could be established in different cities also “In Shaa Allah”.

مہربان ہاسپٹل

مہربان علی نے اپنے دادا سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزیؒ کی درگاہ کے پاس ایک ہاسپٹل قائم کیا ہے جہاں غریبوں کا مفت علاج اور اُن کو مفت ادویات فراہم کی جاتی ہیں جن کی سربراہی وقار احمد سومرو کر رہے ہیں اور اُن کے ساتھ  ڈاکٹر محمد ارشد قریشی (ایم بی بی ایس) جو کہ ایک جرنل فزیشن ہیں، مہربان علی اور اُن کی ٹیم کی کوشش ہے کہ آنے والے وقت میں مہربان ہاسپٹل مختلف شہروں میں بھی قائم کئے جائیں انشاء اللہ۔

Dastarkhuwan e Imam Hassan A.s.

Mehrban Ali by keeping established his ancestral custom has established Dastarkhuwan e Imam Hassan A.s.at Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi R.A, hundreds of poor people eat food stomach full. The services of Dastarkhuwan e Imam Hassan A.S are performed by father of Mehrban Ali Syed Fateh Ali Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi and Shahryar Ali along with the devotees of Shrine. It is the effort of Mehrban Ali and his team that such Dastarkhuwan should be established in different cities also.

دستر خوانِ امام حسن علیہ السلام

 مہربان علی نے اپنی خاندانی رسم کو قائم رکھتے ہوئے دسترخوانِ امام حسن علیہ السلام درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزیؒ پر قائم کیا ہے، جہاں سینکڑوں مساکین پیٹ بھر کر کھانا کھاتے ہیں۔ دسترخوانِ امام حسن علیہ السلام کی خدمات مہربان علی کے والد سید فتح علی شاہ شمسی سبزواری تبریزی اور شہریار علی درگاہ کے عقیدت مندوں کے ساتھ سرانجام دیتے ہیں۔ مہربان علی اور مہربان علی کے ٹیم کی کوشش ہے کہ ایسے دسترخوان مختلف شہروں میں بھی قائم کئے جائیں انشاء اللہ۔

Free Ration For The Needful

It is the effort of Mehrban Ali that those are our poor brothers and sisters and whose house there is no one to earn they should be provided free Ration It is the effort of Mehrban Ali and his team that this welfare could be performed in different cities. The responsibilities of the serves of sharing free Ration are being handled by the elder brother of Mehrban Ali Syed Shan Ali Shamsi Sabzwari Tabrezi and Shahryar Ali.

مستحقین کے لئے مُفت راشن

مہربان علی کی کوشش ہے کہ وہ ہمارے غریب بھائی جن کے گھر میں کمانے والا کوئی نہیں، اُن کو مفت راشن فراہم کیا جائے تبھی مہربان علی اور مہربان علی کی ٹیم اس کوشش میں ہیں کہ اس کارِ خیر کو زیادہ سے زیادہ مختلف شہروں میں انجام دیا جائے ،مفت راشن تقسیم کی ذمہ داری مہربان علی کے بڑے بھائی سید شان علی شمسی سبزواری تبریزی اور شہریار علی نبھاتے ہیں۔

“Berozgari Khatm Program” (Unemployment ending Program)

It is the effort of Mehrban Ali those are poor brothers who does not have neither education and nor they have any skills they should be taught free computer and mobile repairing so that they can support their home, In this “Berozgari Khatm Program” (Unemployment ending Program) Niaz Hussain is performing his services who has 10 years of expiereince.

بیروزگاری ختم پروگرام

مہربان علی کی کوشش ہے کہ ہمارے جن غریب بھائیوں کے پاس نہ تعلیم اور نہ ہی کوئی ہُنر ہے اُن کو مفت کمپیوٹر اور موبائل رپیئر کرنا سکھایا جائے تاکہ وہ اپنے گھر کی کفالت کر سکیں، اس بیروزگاری ختم پروگرام میں نیاز حسین اپنی خدمات سرِ انجام دے رہے ہیں جن کے پاس 10 سال کا تجربہ ہے۔

Mehrban Shadi Daftar – Mehrban Marrige Bureau

Because nowadays finding good relations has become very difficult in our world that is why Mehrban Ali established a marriage bureau so that the person who wants to acquire a good relation for himself / herself they can be easily provided perfect match. The responsibilities of Mehrban Marriage Bureau are being performed by the brothers of Mehrban Ali Syed Jan Ali Shamsi Sabzwari Tabrezi and Syed Imran Ali Shamsi Sabzwari Tabrezi.

مہربان شادی دفتر

کیوں کہ ہمارے یہاں آج کل کے دور میں اچھے رشتے ملنا بہت ہی مشکل ہوگیا ہے تبھی مہربان علی نے مہربان شادی دفتر قائم کیا ہے تا کہ جو انسان اپنی شادی کے لئے اچھا رشتہ حاصل کرنا چاہے تو ان کو آسانی سے بہترین رشتے میسر کئے جاسکیں۔ مہربان شادی دفتر کی خدمات مہربان علی کے بھائی سید جان علی شمسی سبزواری تبریزی اور سید عمران علی شاہ شمسی سبزواری تبریزی انجام دے رہے ہیں۔

Mehrban Stones

As nowadays it has become much difficult to acquire real stone according to your name and sign that is why Mehrban Ali has established Mehrban Stones so that the stone wearer could easily get his lucky stone at the services of Mehrban Stones are being performed by the brother of Mehrban Ali Syed Imran Ali Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi.

مہربان اسٹونز

جیسا کہ آج کل کے دور میں اصل پتھر، اپنے نام اور برج کے حساب سے حاصل کرنا بہت ہی مشکل ہو گیا ہے تبھی مہربان علی نے مہربان اسٹونز کی بنیاد رکھی تاکہ ہر پتھر پہننے والے کو اُس کا لکی پتھر آسانے سے مل سکے، مہربان اسٹونز کی خدمات مہربان علی کے بھائی سید عمران علی شمسی سبزواری تبریزی انجام دیتے  یں۔

ilm e Jafar

Imam Jafar Sadiq Alaihis Salaam stated that “Among us “Ahl-e-Bait” two types of knowledge have been descended (01) In the shape of the Islamic laws which are for the whole community (2) In the shape of ” Jafar ” which is the heritage of us “Ahl-e-Bait”. Mehrban Ali in the light of ” ilm e Jafar ” read which ever different problem’s ” Wazaif ” in the written books of ancestors, he has placed ” WAZIFA IMAM ALI A.S ” for the sake of Allah on his website and application and each special and common can acquire benefit from it and for marriage purpose according to the Date of Birth that relation is better for any human for finding it out Mehrban Ali has established a section ” PERFECT MATCH ” on his website and application for the sake of Allah so that each human before marriage can do ” Istakhara “. The human name is much necessary for the success of human in his life that is why Mehrban Ali has established a section on his website and application that every child being born in which for the sake of Allah according to the date of birth can acquire their ” LUCKY NAME ” along with meaning. For finding lucky stone people use to run here and there that is why Mehrban Ali has established a section ” FIND YOUR LUCKY STONE ” on his website and application in which for the sake of Allah each human can find our their lucky stone according to their name and date of birth.

علم جفر

امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا کہ ”ہم اہلِ بیت پر (2) قسم کے علم نازل ہوئے، (1) شریعت کی صورت میں جو ساری اُمّت کے لئے ہے (2) جفر کی صورت میں جو ہم اہلِ بیت کی  میراث ہے، مہربان علی نے علم جفر کی روشنی میں مختلف پریشانیوں کے جو جو وظائف اپنے دادا پر دادائوں کی لکھی ہوئیں کتابوں سے پڑھے،وہ انہوں نے فی سبیل اللہ اپنی ویب سائٹ اور ایپلیکیشن پر رکھ دیے ہیں تاکہ ہر خاص و عام اُس سے فیض حاصل کر سکےاور شادی کے لئے تاریخِ پیدائش کےحساب سے جو رشتہ جس انسان کے لئے بہتر ہے وہ معلوم کرنے کے لئے مہربان علی نے اپنی ویب سائٹ اور ایپلیکیشن میں (پرفیکٹ میچ) کے نام سے ایک شعبہ قائم کیا ہے تاکہ ہر انسان شادی سے پہلے اپنے رشتے کا فی سبیل اللہ استخارہ کر لے۔
انسان کا نام انسان کی زندگی میں کامیابی کے لئے بہت ضروری ہوتا ہے تبھی مہربان علی نے ہر پیدا ہونے والے بچے کے لئے ایک شعبہ قائم کیا ہے جس میں تاریخ پیدائش کے حساب سے اپنا لکی نام ، مطلب کے ساتھ فی سبیل اللہ حاصل کر سکتا ہے۔ لکی پتھر معلوم کرنے کے لئے لوگ ادھر اُدھر بھاگتے تھے تبھی مہربان علی نے ایک شعبہ اپنی ویب سائٹ اور ایپلیکیشن میں قائم کی ہے جس میں ہر انسان اپنے نام اور تاریخ پیدائش کے حساب سے اپنا لکی پتھر فی سبیل اللہ معلوم کر سکتا ہے۔

Fee Sabi Lillah Istakhara

Father of Mehrban Ali Syed Fateh Ali Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi in the light of Quotes of Imam Ali A.S tell the Wazaif ” WAZIFA IMAM ALI A.S” for the sake of Allah Istakhara and ending the problems of every distressed person so that each distressed human can get the hope for better life.

فی سبیل اللہ استخارہ

مہربان علی کے والد سید فتح علی شاہ شمسی سبزواری تبریزی فی سبیل اللہ استخارہ اور پریشان حال کی پریشانی کو ختم کرنے کے لئے امام علی علیہ السلام کے اقوال کی روشنی میں وظائف بتاتے ہیں تاکہ پریشان حال انسان کو بہتری کی اُمید مل سکے۔

Hair Of Rasool Akram S.A.W

Alhamdolillah! One of our dearest friend Mr. Salman has gifted us his priceless thing of Life that is The “Hair of Rasool e Pak Sallaho Aleh Wa’Alehi Wassalam”, which he got from Mr. Mohammad Sohail Faqir Qadri Meharvi from Sukkur. That Precious Hair of Rasool e pak sallaho Aleh Wa’Aalehi Wassalam is present at Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi for  those Momineen (Believers) who are visiting.

موئے مبارک

اللہ کے فصل و کرم سے ہمارے پیارے دوست محمد سلمان نے اپنی زندگی کی سب سے انمول چیز اللہ کے رسول حضرت محمد مصطفٰی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاک موئے مبارک جو اُن کو محمد سہیل فقیر قادری مہروی سکھر والے سے ایک انمول تحفہ بن کے ملا تھا تو انہوں  نے اللہ کے رسول حضرت محمد مصطفٰی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے موئے مبارک کو فی سبیل اللہ ایک سیدزادہ سمجھ کر مجھے اس انمول تحفہ سے نوازا۔ میں نے اُس پاک مقدس تحفہ کی زیارت کرنے کے بعد یہ چاہا کہ ہر خاص و عام جو اللہ کے رسول حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے عشق کرتا ہے اِس کی زیارت کر سکے تبھی ہم نے ہمارے آقا کے موئے مبارک کو ایک محدود وقت کے لیے درگاہ سید حسین شاہ شمسی پہ رکھ دیا ہے اگر آپ اللہ کے رسول حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے موئے مبارک کی  زیارت کرنا چاہتے ہیں تو آج ہی اِس امام بارگاہ پہ آئیں اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے موئے مبارک کی زیارت کرکے اپنا ایمان تازہ کریں۔

Ziyarat e Turab

Many years ago, Hazrat Shah Shams Tabrez’s tribe migrated to Sindh. There was a female whom people knew as Syeda Badshah Bibi. She had her own respect among people. Many females visited her for her (Ziyarat), also took taveez (Amulet) for themselves.
Bibi Badshah Zadi used to take people every year with her to visit Imam e Hussain A.S. Its been done for many years. But when her time came and she found that people of Sindh love Imam Hussain A.S a lot and want to visit his shrine but many of them don’t have that much wealth for travel. So she decided to bring soil of the grave of Imam Hussain A.S, also brought soil from the grave of Imam Ali A.S for those  people who can’t afford travel, can ziyarat that Turab (Soil of grave of Imam Hussain as & Imam Ali A.S).
This Turab is also available today at shrine of Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi as people can visit and make fresh their spirit.
Mehrban Ali decided to carry on that mores and In Shaa Allah on the day of Eid e Ghadeer Mehrban Ali will send 2 Momineens to Ziyarat e Karbala Moula (A.S) to those who visited Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi and filled detail and put their names in boxes which are placed there for the same purpose. Along with this Mehrban Ali will also provide this chance to those who are unable to come at Dargah can also take part in this draw through his website.

زیارتِ تُراب

آج سے کئی سو سال پہلے حضرت شاہ شمس تبریز کے خاندان نے سندھ کی طرف ہجرت کی۔ جس میں ایک خاتون تھیں جنہیں زمانہ سید بادشاہ بی بی کے نام سے بُلایا کرتا تھا۔ جن کی اُس وقت کے لوگوں کے درمیان ایک الگ ہی اہمیت تھی۔ کافی خواتین میلوں سفر کر کے اُن کی زیارت کو آتی تھیں اور اپنے اور گھر والوں کے تعویزات لیتی تھیں۔

بی بی بادشاہ زادی ہر سال اپنے ساتھ مومنین کو امام حسینؑ اور امام علیؑ کی زیارت کو لیکر جاتی تھیں جو مومنین اپنے دامن میں وسعت نہیں رکھتے تھے۔ کیوں کہ سندھ کے لوگ امام حسینؑ اور امام علیؑ کے ساتھ انسیت رکھتے ہیں اور یہ سلسلہ سالہا سال چلتا رہا مگر جب اُن کو معلوم ہوا کہ اُن کی زندگی کے ایام کافی کم بچے ہیں تو انہوں نے امام حسینؑ اور امام علیؑ کی آخری زیارت کے بعد امام حسیبنؑ اور امام علیؑ کے قبر مبارک کی مٹی وہاں سے لیکر آئیں تاکہ مومنین اُس قبر مبارک کی مٹی کی زیارت کرکے شرف حاصل کر سکیں۔

آج بھی وہ مٹی درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی پر موجود ہے تاکہ کو جو مومنین کربلا جا نہیں سکتے وہ قبر مبارک امام حسینؑ اور امام علیؑ کی قبر کی مٹی کی زیارت کر کے اپنا ایمان تازہ کر سکیں۔

اِسی رسم کو بڑھاتے ہوئے مہربان علی نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ وہ بھی ہر سال جتنی اللہ تعالیٰ نے اُن کے دامن میں وسعت دی ہے اُن کے تحت مومنین کو کربُلا بھیجا کریں گے۔ اُن مومنین کو جو درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی پر موجود دبوں میں اپنا نام شہر کا نام اور موبائل نمبر لکھ کرفی سبیل اللہ  ڈالتے ہیں انشاءاللہ انہی خوش نصیبوں میں سے قرعہ اندازی کے ذریعے عیدِ غدیرکے دن 2 مومنین کو کربلا بھیجا جائے گا۔

جو مومنین درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی پر آنہیں سکتے اُن مومنین کے لیے مہربان علی نے اپنی ویب سائٹ پہ فی سبیل اللہ طریقے کار رکھا ہے جس کے ذریعہ وہ بھی قرعہ اندازی کا حصہ بن سکیں گے انشاءاللہ۔

Water Of Healing

There is water around shrine of Hazrat Ghazi Abbas Alamdar which do Tawaf every time of the Shrine of Ghazi Abbas Alamdar. Nobody knows from where that water comes from. That water never fetid. That Water is called Water of healing.
Syed Mehrban Ali Shamsi Sabzwari Tabrezi brings that water from the Shrine of Hazrat Ghazi Alamdar and make it available on the Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi for those patient who does not get heal. In Shaa Allah after using this water they will be healed by the grace of Allah. In Shaa Allah.

آبِ شفاء

حضرت غازیِ عباس علمدار کی قبرِ مبارک کو پانی طواف کرتا ہے، جس کو آبِ شفاء  کہا جاتا ہے  یہ پانی کہاں سے آرہا ہے اِس کا کسی کو کوئی علم نہیں ہے اور یہ مسلسل مولا غازیِ عباس کا طواف کرتا رہتا ہے اور اِس پانی میں کبھی کوئی بدبو بھی نہیں ہوئی۔ وہی پانی جس کو آبِ شفاء کہا جاتا ہے مہربان علی نے درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی فی سبیل اللہ مومنین کے لئے رکھ دیا ہے۔  تاکہ درگاہ پہ آنے والے زیارت کے بعد اگر وہ پانی حاصل کرنا چاہیں تو وہاں سے وہ پانی حاصل کر سکیں جو کہ مریضوں کے لئے  شفاء ہے کوئی بھی مریض ہو جس کا کوئی علاج نہ ہو وہ انشاءاللہ اِس پانی کو پی کے صحت یاب ہو جائے گا۔

Ginan & Used Stones Of Shah Shams Tabrez (R.A.)

Poetry of Shah Shams Tabrez and written prays (Ginan) are still being used at many places. His own written prays (Ginan) & Poetry of his era are available at the Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi as people can visit and read those precious poetry and prays.

Along with that The Stone which Shah Shams Tabrez used to wear in his neck is also available there along with many spiritual personalities used stones are available there i.e. Syed Kabir Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi, Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi as people can visit and see these precious stones for blessing.

حضرت شاہ شمس تبریزؒ کے گنان اور پتھر

حضرت شاہ شمس تبریزؒ کی شاعری اور لکھے ہوئے گنان جو کے آج بھی مومنین کافی جگہوں پہ استعمال کیا کرتے ہیں۔ اُن کے ہی ہاتھوں کے لکھے ہوئے انہی کے زمانہ کے مہربان علی صاحب نے اپنے دادا سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی کے درگاہ پہ رکھ دیے ہیں تاکہ جومومنین شاہ شمس تبریزؒ کو دیکھ نہیں پائے وہ آج بھی اگر چاہیں تو اُن کے ہاتھ کے لکھے ہوئے گنان  کی زیارت کر کے اپنے ایمان کو تازہ کرلیں۔

اِس کے ساتھ ساتھ شاہ شمس تبریز کے گلے میں پہنے ہوئے پتھر جو وہ استعمال کیا کرتے تھے وہ پتھر اور اُن کے ساتھ ساتھ مہربان علی کے جو بھی بزرگِ اشخاص تھے جس میں اُن کے دادا سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی اور حضرت کبیر شاہؒ اور اُن کے بزرگ جو جو پتھر، تعویز تسبیحات استعمال کیا کرتے تھے وہ بھی اُن کے ساتھ رکھوا دی ہیں تاکہ کو مومنین اُن سب چیزوں کی بھی زیارت کر سکیں۔

Amulet of Shams Tabrizi

In this world there are many people who are facing bad sight and black magic. Due to which they face many problems in life, they also can’t focus on their vision and life goals. Hazrat Shah Shams Tabrez had written a Taveez (Amulet) for this matter. Which is made from the Ayat e Kareema (Quran e Pak). From the blessing of Allah and by wearing this Taveez(Amulet), black sight and black magic does not work and people get to the success from failure.
That is the reason for which we have made it available at the Dargah of Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi as everyone can purchase this and get its benefit.
It’s suggested for anyone who is facing black magic or bad sight to visit Dargah Syed Hussain Shah Shamsi Sabzwari Tabrezi and get this taveez (Amulet) FEE SABI LILLAH (Free) and get success.
Indeed, Allah is great, and He has put blessing in his words (Ayat e Kareema)

تعویزِ شمس

جب جب کوئی بھی شاہ شمس تبریزؒ کے پاس پریشانِ حال آتا تو شاہ شمس تبریزؒ اُس کو یہ مقدس تعویز لکھ  کے دیتے تھے اور شاہ شمس تبریزؒ فرماتے! اُس مقدس تعویز کو اپنے بازو یا گھر میں رکھو تا کہ جو مسئلہ مسائل ہیں وہ اللہ کے کرم سے اور اِس تعویز کی برکت سے ساری مصیبتیں اور مسئلہ مسائل دور ہو جائیں۔ یہ لکھا ہوا تعویز پاوڈر کاپی میں مہربان علی شمسی نے سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی کی درگاہ پہ رکھ دیا ہے تاکہ کہ وہ مومنین جو پریشانِ حال اور مصیبتوں کے مارے ہیں وہ درگاہ سید حسین شاہ شمسی سبزواری تبریزی پہ جا کر وہ مقدس تعویز فی سبیل اللہ (جو تعویز آپ  ہماری ویب سائٹ پہ دیکھ سکتے ہیں) آپ اِس درگاہ سے حاصل کر سکیں۔ پاوڈر کاپی میں جو کہ آپ دی گئی ہدایت کے تحت استعمال کریں جس سے انشاءاللہ آپ تمام مسئلہ مسائل سے نجات پا سکیں گے۔

Mehrban Ali’s Early Life.

Since the childhood Mehrban Ali had keen interest in ” Noha Khuwani ” ” Naat Khuwani ” for which he used to go to his teacher Ustad Mohamamd Shafi Warsi from Tando Mohammad Khan to Hyderabad and this continuity kept running for many years during which Mehrban Ali’s many albums of Noha Khuwani kept coming because almost the whole day used to spend by going from Tando Mohammad Khan to Hyderabad daily so Mehrban Ali family decided to we should re locate to Hyderabad so that Mehrban Ali could have easiness in learning. After that this continuity kept running for many years because Mehrban Ali thought he should spread his knowledge to the whole world through which human services could be performed. Mehrban Ali for many years kept requesting to various T.V channels that he by the source of his interview could spread his message to whole world. Mehrban Ali started to give most of his time to them and he used to go from Hyderabad to Karachi so that could deliver these types of information to the people. During that his continuity of ” Noha Khwani ” and ” Naat Khuwani ” was also running along because during that time he was not being able to give them much time that is why Mehrban Ali thought that by translating ” Quran e Pak ” in easy Urdu should be recorded so that upcoming generation by listening to it could acquire benefit and profit but daily travel from Hyderabad to Karachi was very difficult for Mehrban Ali that is why family of Mehrban Ali decided that we should be relocated to Karachi so that Mehrban Ali could deliver all the things easily to the world. This is how Mehrban Ali along with giving information to many T.V channels in Karachi also started to write his books and started the series of giving information through a YouTube channel whom which by the beatitude of Allah people loved very much. Today there are more then 2 millions of subscribers of the channel.

مہربان علی کی شروعاتی زندگی۔

بچپن سے ہی مہربان علی نوحہ خوانی اور نعت خوانی کا شوق رکھتے تھے جس کے لئے وہ ٹنڈومحمد خان سے حیدرآباد اپنے استاد محمد شفیع وارثی صاحب کے پاس نوحہ اور نعت خوانی سیکھنے جاتے تھے اور یہ سلسلہ کئی سالوں تک چلتا رہا جس کے دوران مہربان علی کے کئی سارے ایلبم بھی آتے رہے کیوں کہ روزانہ ٹنڈومحمد خان سے حیدرآباد جانے میں تقریباََ پورا دن لگ جاتا تھا تو مہربان علی کے خاندان نےیہ فیصلہ کیا کہ حیدرآباد منتقل ہو جاتے ہیں تاکہ مہربان علی کو سیکھنے میں آسانی ہو اُس کے بعد بھی یہ سلسلہ کافی سالوں تک چلتا رہا چونکہ مہربان علی نے سوچا کہ اپنے علوم کو دنیا تک پہنچائیں جس کے ذریعے انسانوں کی خدمت ہو سکے تو مہربان علی کافی عرصے سے کئی ٹی وی چینلز سے درخواست کر رہے تھے کہ وہ عوام کے پاس اپنے انٹرویو کے ذریعے اپنے پیغام کو دنیا تک پہنچا سکیں تو مہربان علی نے اپنا زیادہ سے زیادہ وقت اُن کو دینا شروع کیا اور وہ حیدرآباد سے کراچی جاتے تھے تاکہ اِس طرح کی تمام معلومات لوگوں تک پہنچا سکیں۔ اسی دوران اُن کا نعت خوانی اور نوحہ خوانی کا سلسلہ بھی چل رہا تھا چونکہ اُس دوران وہ اُن کو زیادہ وقت نہیں دے پا رہے تھے تو مہربان علی نے یہ سوچا کہ قرآنِ پاک کو آسان اردو میں ترجمہ کرکے رکارڈ کیا جائے تاکہ آنے والی نسلیں اُس کو سُن کر اُس سے فیض اور فائدہ حاصل کر سکیں لیکن حیدرآباد سے کراچی کا روزانہ سفر مہربان علی کےلئے کافی دشوار تھا  تبھی سید  مہربان علی کے خاندان نے یہ فیصلہ کیا کہ حیدآباد سے کراچی منتقل ہوجائیں تاکہ مہربان علی تمام چیزوں کو آسانی سے دنیا تک پہنچا سکیں۔ یوں مہربان علی نے کراچی میں کافی ٹی وی چینلز کو معلومات دینے کے ساتھ ساتھ  اپنی کتابیں لکھنی شروع کیں اورایک یوٹیوب چینل کے ذریعہ معلومات دینے کا سلسلہ شروع کیا جس کو اللہ پاک کی برکت سے لوگوں نے بہت چاہا جس چینل کے آج 20 لاکھ سے زائد سبسکرائبرز ہیں۔